ناراض مسافر اور واشنگٹن کا سفر

بیرسٹر حمید باشانی

میں ٹورانٹو ائیر پورٹ کے ڈیپارچر لاونج میں بیٹھا تھا۔ واشنگٹن کے لیے پرواز کی بورڈنگ کے لیے ابھی کافی وقت تھا۔ لاونج تقریبا خالی پڑا تھا۔ اکا دکا مسافر بیٹھے اونگھ رہے تھے، یا اپنے پسندیدہ الیکٹرانک کھلونوں میں مگن تھے۔ اکتاہٹ سے بچنے کے لیے میں اپنے تھیلے سے لیپ ٹاپ نکال ہی رہا کہ وہ شخص آکر میرے ساتھ والی نشست پر بیٹھ گیا۔ لگتا ہے آپ بھی واشنگٹن جا رہے ہیں؟ اس نے بلا اجازت و بلا تکلف انگریزی میں گفتگو کا آغاز کیا۔

وہ شخص چہرے مہرے اور لہجے سے دیسی یعنی بر صغیر کا باشندہ لگتاتھا۔ ہاں میں واشنگٹن ہی جا رہا ہوں ، میں نے اردو میں جواب دیا۔ یہ لوگ جو سلوک ہمارے ساتھ کر رہے ہیں، اس کا انجام اچھا نہیں ہوگا۔ اس نے انتہائی درشت لہجے میں کہنا شروع کیا۔ اس کا چہرہ غصے سے سرخ ہو رہا تھا۔ دیکھیں میں کینڈین شہری ہوں۔ اس ملک میں ایک مدت سے رہ رہا ہوں۔ لیکن اس امریکی امیگریشن والے نے مجھے اپنے ہی ائیرپورٹ پر آدھے گھنٹے تک اندر بٹھائے رکھا۔ الٹے سیدھے سوالات کیے۔ مجھے بتایا کہ میرا نام کسی نو فلائی یا خطرناک لسٹ پر ہے۔ اور اگر مجھے امریکہ جانا ہی ہے، تو اس کاروائی سے گزرنا ہی پڑے گا۔

افسوس مجھے یہ نہیں کہ محض میرے نام یا عقیدے کی وجہ سے مجھ پر شک کیا جا رہا ہے۔ افسوس اس بات کا ہے کہ مجھ پر ان لوگوں کا ساتھی ہونے کا شک کیا جا رہا ہے، جن کے میں ہمیشہ سخت خلاف رہا ہوں، اور ستم ظریفی یہ ہے کہ خود وہ لوگ مجھے اپنا دشمن سمجھتے ہیں۔ اور میں ہر جگہ دہشت گردوں ، ان کے نظریات اور ان کی حرکات کے خلاف کھل کر بولتا رہا ہوں۔ لیکن یہ امریکی امیگریشن والے مجھے اورا ن بے رحم دہشت گردوں کو ایک ہی لاٹھی سے ہانک رہے ہیں۔

میں نے اس شخص کو تسلی دینے کے لیے کہا کہ فکر مت کرو اس پورے عمل میں آپ اکیلے نہیں ہیں۔ بد قسمتی سے ہزاروں لوگوں کو مغرب کے مختلف ہوائی اڈوں اور سرحد پار کرنے کے دوسرے مقامات پر اس محض اپنے نام یا مذہبی و علاقائی پس منظر کی وجہ سے اس صورت حال کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ مگر یہ صورت حال آہستہ آہستہ بہتر ہو رہی ہے۔ اور جلد ہی حالات معمول پر آ جائیں گے۔

ٹورانٹو سے امریکہ جانے والی پروازوں کے مسافروں کی امیگریشن کلیرنس ٹورانٹو ائیرپورٹ پر ہی ہو جاتی ہے۔ یہ پروازیں امریکہ میں ڈومیسٹک سمجھی جاتی ہیں، اور ان کے مسافر امریکی ہوائی اڈوں پر امیگریشن کے عمل سے گزرے بغیر باہر نکل جاتے ہیں۔ یہ طریقہ کئی لوگوں کو پسند ہے۔ وہ امریکہ کے ہوائی اڈوں پر پوچھ گچھ اور تلاشی وغیرہ کے عمل سے گزرنے کے بجائے اپنے ہی ائیر پورٹ پر اس عمل سے گزر جانا بہتر سمجھتے ہیں۔

ہوائی اڈوں پر تلاشی اور سوال و جواب کا سلسلہ اب عام سا عمل سمجھا جاتاہے۔ اب کوئی اسے ذاتی یا جذباتی معاملہ نہیں بناتا ۔ مگر ایسے لوگوں کی بھی کمی نہیں ہے، جو اس عمل سے گزرنا اپنی توہین تصور کرتے ہیں، جو نائن الیون کے بعد مختلف ہوائی اڈوں پر شروع ہوا ہے۔ کینیڈا کی کئی معروف شخصیات، شاعر، ادیب ، دانشور اور سیاست دان اس عمل پر اعتراض کر چکے ہیں۔ اور کچھ لوگوں نے تو اس عمل سے گزرنے کے بجائے احتجاجاساری زندگی امریکہ نہ جانے کی قسم اٹھائی ہوئی ہے، ان لوگوں نے تلاشی اور فنگرپرنٹ دینے کے بجائے امریکہ نہ جانے کا فیصلہ کیا ہوا ہے۔ حالاں کہ ان میں سے کچھ لوگوں کو بسلسلہ ملازمت، سمینار میں شرکت یا لیکچر وغیرہ کے لیے امریکہ جانا ضروری ہوتا تھا۔ 

یہ ایک تکلیف دہ صورت حال ہے، جس کے پس منظر سے ہم سب واقف ہیں۔ نائن الیون سے پہلے کینیڈامیں رہنے والے لوگ پاکستانی پاسپورٹ پر بھی بغیر ویزے کے امریکہ جاتے تھے، اور کوئی ایک سوال تک نہ کرتا تھا۔ مگر نائن الیون نے سب کچھ بدل کر رکھ دیا۔ سفر کی دنیا اور اس کے قواعد و ضوابط کو الٹ پلٹ دیا۔ اس الٹ پلٹ کا جن ممالک کے مسافر سب سے زیادہ شکار ہوئے ان میں پاکستان سر فہرست ہے ، حالاں کہ نائن الیون کی فہرست میں شامل لوگ عرب تھے۔ مگر پاکستانی مسافر اس حد تک اس کی زد میں آئے کہ بعض وزراء اور ہائی پروفائل سیاست دانوں تک کو بھی ا مریکی ہوائی اڈوں پر تلاشی کے عمل سے گزرناپڑا۔

میں نے اس ناراض اور غصے سے بھرے ہوئے مسافر کو بتایا کہ یہ جو سلوک آپ ساتھ ہوا ہے وہ برا ہے، مگر یہ اس سے کئی زیادہ برا ہوسکتا تھااگر آپ کو اس نام کے ساتھ کسی امریکی ہوائی اڈے پر کسی عالمی پرواز سے اترناپڑتا ۔ مگر آپ خوش قسمت ہو کہ ٹورانٹو ائیرپورٹ پر ہو ، جہاں انہوں نے آپ کو عزت سے دس پندہ منٹ بٹھایا ہوگا، اور بار بار معذرت بھی کی ہوگی۔

میں واشنگٹن میں کشمیر ی رہنماسردار خالد ابراہیم کے تعزیعتی ریفرنس میں شرکت کی غرض سے گیا تھا۔ کمیونٹی کے بہت ہی پر خلوص مہمان نوازلوگوں اور کچھ پرانے دوستوں اور کمیونٹی لیڈروں سے ملاقات اور تبادلہ خیال ہوا۔ ایک تفصیلی ملاقات جناب ساجد تارڑ صاحب سے بھی ہوئی، جن کو یہاں مقامی حلقوں میں صدر ٹرمپ کا مشیر اور پر جوش حامی سمجھا جاتا ہے۔ تارڑ صاحب دلچسب آدمی ہیں۔ ان سے کئی متنازعہ امور پر تبادلہ خیال ہوا ۔ اس میں کشمیر پر پاکستان و بھارت کا کردار، امیگریشن اور اقلیتوں کے حوالے سے صدر ٹرمپ کا موقف اور ان کی طرف سے اس موقف کی کھلی حمایت وغیرہ شامل ہیں۔

ساجد تارڑ صاحب نے وعدہ کیا کہ وہ کشمیر کے حوالے سے صدر ٹرمپ کی توجہ حاصل کرنے کی کوشش کریں گے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ ہ وعدہ ایفا ہو گا یا پھر کشمیر پرکیے جانے والے ان سینکڑوں وعدوں میں سے ایک ہو گا، جو کبھی ایفا نہ ہوئے۔ تارڑ صاحب کی بہت ساری باتوں پر اختلاف کی واضح گنجائش ہے۔ ہم نے یہ باتیں چھڑیں اور ان پر اتفاق نہ کرنے پر اتفاق کیا۔ 

واشنگٹن ایک خوبصورت، سر سبز اور سلیقے سے چلتا ہوا شہر ہے۔ دوستوں نے ایک سکول دکھایا ، جس میں ایک سو پچاس سے زائد ممالک کے بچے پڑھتے ہیں۔ یہ بچے ظاہر ہے دنیا کے حکمران ،خوش حال اور خوش قسمت طبقات کے بچے ہیں، جو تیسری دنیا کے مختلف ممالک سے آکر ایسے سکولوں میں پڑھتے ہیں۔ واپس اپنے ملکوں میں جا کر حکمران، بیوروکریٹ اور سول سرونٹ بنتے ہیں۔ اکثرفیصلہ ساز لوگوں میں شامل ہوتے ہیں۔ مگر واشنگٹن میں دیکھی ہوئی چیزوں اور سکولوں میں سیکھے ہوئے علم کو لپیٹ کر ایک طرف رکھ دیتے ہیں۔ یہ سلسہ برسوں سے جاری ہے۔

صرف سکول کے بچے ہی نہیں سول سرونٹ کی ایک بڑی تعداد بھی تیسری ی دنیا سے آکر یہاں تعلیم و تربیت لیتی ہیں۔ یہ لوگ ان شہروں کا انتظام و انصرام اور طرز حکمرانی اپنی انکھوں سے دیکھتے ہیں۔ مگر وطن جا کر کسی اچھی بات کی نقل ہر گز نہیں کرتے۔ اسکے بر عکس انہوں نے یہاں کی کوئی نہ کوئی منفی بات، کوئی کمی یاکجروی تفصیلات سمیت یاد رکھی ہوتی ہے۔ اور ہر محفل میں یہ تفصیل بیان کرنا اور مغرب کے خلاف زہر اگلنا ضروری سمجھتے ہیں۔

یہ مغرب پلٹ لوگ عام آدمی کی نسبت مغرب کے حوالے سے کہیں زیادہ احساس کمتری کا شکا رہوتے ہیں۔ کم فہمی یا لا علمی کے شکار لوگوں کو مغرب کے خلاف من گھڑت کہانیوں کو آنکھوں دیکھا واقعہ بنا کر سناتے رہتے ہیں اور داد سمیٹتے رہتے ہیں۔ ان لوگوں کو یہاں کے سر سبز و شاداب علاقے، آلودگی سے پاک فضا اور پانی، سڑکوں کے کنارے سلیقے سے اگائے گئے درخت، ضابطوں کی پابند ٹریفک، وقت پر آتی جاتی ٹرینیں، بسیں اور ہوئی جہاز، صاف ستھرے شاپنگ سنٹرز، ریستوران اور پبلک واش رومز، عوام کی حفاظت اور خدمت کرتی ہوئی پولیس، خوش اخلاقی سے پیش آتے ہوئے اور دیانت داری سے کام کرتے ہوئے سول سرونٹس، اور انصاف کرتے ہوئے جج ، صاف ستھرے ہسپتال ، انکساری سے علاج کرتے ہوئے ڈاکٹرز، سکول، کالجز اور یونیورسٹیاں بالکل نظر نہیں آتی نہ یاد رہتی ہیں۔ منفی مثبت ہر جگہ موجود ہوتے ہیں، مگر تیسری دنیا کے لیے واشنگٹن جیسے شہروں میں سیکھنے کے لیے بہت کچھ ہے۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *