کرشنا کماری کی آمد اور مولانا سمیع الحق کی رخصتی

پاکستان میں ہونے والے سینیٹ کے انتخابات میں ایسا پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی اور اقلیتی ہندو مذہب سے تعلق رکھنے والی کرشنا کماری کو منتخب کیا گیا ہے۔دوسری جانب مولانا سمیع الحق کو شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

 پاکستان پیپلز پارٹی سے تعلق رکھنے والی اڑتیس سالہ کرشنا کماری کا سفر طویل تھا۔ ان کا تعلق دلت ذات سے ہے، جسے ذات پات کے لحاظ سے بھارت میں اب بھی سب سے ’نچلا ترين‘ اور اچھوت تصور کیا جاتا ہے۔

صوبہ سندھ کے صحرائی علاقے تھر کے ڈسٹرکٹ نگر پارکر کے ایک چھوٹے سے گاؤں سے تعلق رکھنے والی کرشنا کماری کولھی کی حمایت پیپلز پارٹی کی تمام قیادت نے کی تھی۔

 کرشنا کماری ابھی سولہ سال کی ہی تھیں کہ ان کی شادی لال چند سے ہو گئی تھی لیکن ان کے شوہر نے شادی کے بعد بھی تعلیم حاصل کرنے کے لیے ان کا بھرپور ساتھ دیا تھا۔ شادی کے وقت وہ نویں جماعت کی طالبہ تھیں۔

کرشنا کماری نے2013کے دوران سندھ یونیورسٹی سے سوشیالوجی میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی تھی لیکن تعلیم کے ساتھ ساتھ انہوں نے تھر کے غریب لوگوں کی مدد کے لیے فلاحی اور سماجی سرگرمیاں بھی جاری رکھی ہوئی تھیں۔ اس وقت اڑتيس سالہ کرشنا کماری کے انتخاب کو نہ صرف سوشل میڈیا بلکہ پاکستان کے حریف ملک بھارت میں بھی سراہا جا رہا ہے۔

دوسری جانب اس مرتبہ سینیٹ کے انتخابات میں ’فادر آف طالبان‘ کے نام سے مشہور پاکستان کے مشہور مذہبی رہنما مولانا سمیع الحق کو شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ سوشل میڈیا پر کرشنا کماری کی سینیٹ میں آمد کو مولانا سمیع الحق کی رخصتی سے جوڑا جا رہا ہے۔

 ایک سوشل میڈیا صارف کا ٹویٹ کرتے ہوئے کہنا تھا، ’’مولانا سمیع الحق کو مدرسہ ریفارمز کے نام پر سات سو ملین روپے دیے گئے ہیں تاکہ وہ حمایت حاصل کر سکیں لیکن انہیں شکست ہوئی ہے۔ دوسری جانب ایک غریب ہندو خاتون کو کامیابی ملی ہے۔ یہ ترقی پسند پاکستان کی نشانی ہے‘‘۔

پاکستانی پارلیمان کے ایوان بالا کے باون نئے ارکان کے انتخاب کے لیے ہفتہ تین مارچ کو تمام علاقائی اسمبلیوں میں رائے شماری ہوئی۔ غیر سرکاری نتائج کے مطابق حکمران جماعت مسلم لیگ (ن) کے سب سے زیادہ امیدوار کامیاب ہوئے۔

عبوری غیر سرکاری نتائج کے مطابق پاکستان مسلم لیگ (ن) کے پندرہ امیدوار کامیاب ہو کر سینیٹ میں پہنچے ہیں۔ اس کے بعد پاکستان پیپلز پارٹی کے بارہ امیدوار کامیاب قرار پائے جبکہ پاکستان تحریک انصاف کے چھ امیدواروں کو کامیابی ملی۔

DW

3 Comments

  1. نجم الثاقب کاشغری says:

    مولانا سمیع الحق کی شکست عمران خان کی ذہنی و نظریاتی شکست ہے۔ کیونکہ عمران خان نے کہا تھا کہ ان کے اور مولانا(بابائے طالبان) کے نظریات میں ہم آہنگی پائی جاتی ہے۔
    عمران خان نے مولانا کو سات سو ملین دیئے لیکن خیبرپختونخواکی پی ٹی آئی کے 17 ایم پی اے مبینہ طور پر اس سے کہیں کم رقم میں بک گئے،اب عمران کا نزلہ پرویزخٹک پہ ناحق گر رہاہے۔
    سینیٹ الیکشن میں ہارس ٹریڈنگ ضرور ہوئی ہے لیکن مثبت مقاصد اور مثبت نتائج کے لئے!۔۔
    مولانا سمیع الحق کی شکست کی ایک وجہ غالباً یہ بھی ہے کہ اس سے قبل وہ عمران خان کے بارہ میں یہ حقیقت بیان کرچکے ہیں کہ عمران محض ذاتی اقتدار کے حصول کے لئے مذہبی جماعتوں کے آگے پیچھےہوتا ہے ،یہ مخلص شخص نہیں۔جب کہ خود سات سو ملین وصول کرکے ایم ایم اے کی بجائے عمران خان کی گود میں جا بیٹھے۔ مولانا کےقول و فعل کایہ تضاد ایک احمق بھی نظر انداز نہیں کرسکتا۔
    مولانا نے 2012 میں فرمایا تھاکہ حکومت جب تک نیٹو کے سپلائی ٹرک اور ٹینکر نہیں روکے گی اس کے ساتھ بات نہیں ہوگی اور احتجاج جاری رہے گا۔اب نیٹو کی سپلائی کب سے بحال ہے لیکن مولاناکی آنکھوں پہ چڑھے سات سو ملین کے کالے چشمے پہن لینے کی بدولت اب انہیں کابل میں موجود نیٹو کے لئے آتی جاتی یہ سپلائی براستہ خیبر پختونخوا نظر ہی نہیں آرہی،اور عمران خان بھی ان کو قابل قبول ہو گئے۔

    حوالہ مندرجہ ذیل ہے:۔

    President Jamiat-e-Ulema Islam (Samiul Haq faction) Maulana Samiul Haq while utilising the Difa-e-Pakistan Council platform, said on Tuesday that Pakistan Tehreek-i-Insaf (PTI) chief Imran Khan did not want to anger US just so that he could gain power in the country.

    He was talking to media after meeting party officials in Kabeerwaala.
    The JUI-S president said that Khan had been trying to put PTI on both boats of religious groups and the US. Those boats are on completely different and divergent paths, Haq said. He warned Khan that he would not be able to use religious groups for coming to power and have US support at the same time.
    بحوالہ:
    https://tribune.com.pk/story/330216/imran-khan-catering-to-religious-parties-just-to-gain-power-jui-s/

    منافقت، لالچ ، موقعہ پرستی مردہ باد ۔

  2. Janab. Imran ko bhe Molve ke hamait chahey. Nawaz Ur Molve Fazul rehman ka muqabala karna he ur waise bhe Molve ko Maall chahey jahan se bhe miley. So its politics.

  3. Ur janab.yahan har koe personal Iqttadar he chahhta he. Pehle Establishment ne.Nawaz ko PPP ko counter karne ke leay banaya ur ab wo kam Imran kar reha he to just enjoy.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *