پروٹوکول میں گاڑیاں حکومت کی اور اسٹیبلشمنٹ سے لڑنے چلے ہو

پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین اور سابق صدر آصف علی زرداری نے مسلم لیگ ن کے سربراہ میاں نواز شریف کو متنبہ کیا ہے کہ وہ انھیں دھمکی آمیز پیغامات نہ بھیجیں کیونکہ وہ انھیں نہ ڈرا سکتے ہیں اور نہ ہی بھگا سکتے ہیں۔

سندھ کے شہر میرپورخاص میں جمعہ کے روز پاکستان پیپلز پارٹی کے بانی ذوالفقار علی بھٹو کی یوم پیدائش کے حوالے سے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے آصف علی زرداری نے میاں نواز شریف سے مخاطب ہوکر کہا کہ وزیر اعظم، وزیر داخلہ اور وزیر خارجہ سب آپ کے اور تمام ادارے بھی آپ کے ماتحت ہیں پھر کس چیز کی راز داری ہے۔

ہمیں مت بھیجیں ایسے پیغام جس سے آپ سمجھیں کہ ہم ڈر جائیں گے نہ آپ ہمیں ڈرا سکتے ہیں اور نہ بھگا سکتے ہیں۔آپ خود ڈرسکتے ہیں اور لکھ کر دے سکتے ہیں۔ پاکستان پیپلز پارٹی میں یہ روایت نہیں ہے۔ ہمارے لیڈر اور نہ ہی ورکر لکھ کر دیتے ہیں‘۔

سابق صدر کا کہنا تھا کہ سوشل میڈیا اور اور ٹی وی کی وجہ سے اب کوئی بات چھپ نہیں سکتی، جو بھی غیر ملکی سفیر ہیں وہ سب یہ باتیں نوٹ کر رہے ہیں۔

آپ اپنی اسٹیبلشمنٹ سے لڑنے چلے ہو۔ آپ اپنی حکومت کے خلاف جلوس نکالنے چلے ہو جبکہ پروٹوکول میں گاڑیاں ساری حکومت کی استعمال کرتے ہو‘۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے اپنی تقریر میں میثاق جمہوریت کا بھی حوالہ دیا۔ انھوں نے میاں نواز شریف کو مخاطب ہوکر کہا کہ بینظیر بھٹو نے آپ کے ساتھ جو معاہدہ کیا تھا اس میں ٹرتھ ایڈ ری کنسیلیشن کمیشن کا قیام بھی تھا۔

سچ بتائیں آپ نے جنرل ضیاالحق کے دور حکومت سے کیا کیا نہیں کیا۔ ہم بھی بتائیں گے کہ آپ نے کیا کیا۔ ہم نہیں کہتے کہ ہم آپ کو پھانسی لگا دیں گے لیکن ہم کہتے ہیں کہ عوام کی تاریخ میں یہ بات بتائی تو جائے۔‘۔

آصف علی زرداری نے میاں نواز شریف کی گزشتہ پریس کانفرس پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ کہتے ہیں میں پیچھے کے راز بتا دوں گا بھائی پیچھے کے راز تو ہمیں بھی پتہ ہیں۔

آپ خود راز ہو۔ جو ایک یونین کونسل کا الیکشن نہیں جیت سکتا ہے اس نے ایک لاکھ ووٹ لے لیے اس کا راز آپ بتاؤ۔ آپ نے جب انتخابات کی ٹکٹیں دیں تو لوگوں نے کہا کہ ہم جیت نہیں سکتے تو آپ نے کہا کہ ہم جیتوائیں گے۔ اس طرح آدمی حکومتیں بنا تو لیتا ہے لیکن چلا نہیں سکتا‘۔

One Comment

  1. جہالت کی انتہا دیکھیں کہ ابھی تک ایسی مکلوق بھی دنای میں پائی جاتی ہے جو پی پی کی کرپٹ ترین قیادت کی حمایت کرتی ہے۔ جس شخص سے شیاطان بھی مشورہ کرتا ہو اس کے حمایتی بھی موجود ہیں۔ جس ملک کے عوام اتنے گدھے ہیں کہ وہ قیام پاکستان سے لے کر اب تک الو بن رہے ہیں۔ یقینا وہاں زرداری، نواز اور کپتان ہی ھکمران بن سکتا ہے۔ وہان پر کوئی دین دار انسان تو حکمران بنے سے رہا۔ استغفراللہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *