بھینسیں پالنے والا شاعر

اسلم ملک

دیساں دا راجا، میرے بابل دا پیارا، ویر میرا گھوڑی چڑھیا
اک کڑی دی چیز گواچی، بھلکے چیتا آوے گا
دلا ٹھہر جا یار دا نظارہ لین دے
ڈورے کھچ کے نہ کجلا پائیے
میرا دل چناں کچ دا کھڈونا
چھم چھم پیلاں پاواں
چن چن دے سامنے آگیا
ڈاڈھا بھیڑا عشقے دا روگ
گوری گوری چاننی دی ٹھنڈی ٹھنڈی چھاں نی
رباایھدے نالوں موت سکھالی، وچھوڑا مکے سجناں دا
چھپ جاؤ تاریو پادیو ہنیر ویو ہنیر وے
وے سب توں سوہنیا، ہائے وے من موہنیا

لوک گیتوں کی طرح قبول عام حاصل کرنے والے یہ سب فلمی نغمے ایک ہی شاعر کے ہیں۔

ایک ایسا سیدھا سادا شاعرجس کے دن کا بیشتر حصہ بھینسوں کی دیکھہ بھال میں گزرتا تھا۔ خود ان کا دودھ دوہتا تھا۔

وارث لدھیانوی ،جن کا اصل نام چودھری محمد اسماعیل تھا،11 اپریل 1928 کو لدھیانہ میں پیدا ہوئے۔1947 میں ہجرت کرکے لاہور آنا پڑا۔ پہلے عاجز تخلص تھا۔ استاد دامن کے شاگرد ہونے کے بعد وارث لدھیانوی ہوگئے۔ کہتے تھے استاد نے سر پر ہاتھہ رکھا تو میں وارث لدھیانوی بنا ورنہ وارث تو بڑے رلتے پھرتے ہیں۔

وارث لدھیانوی نے بے شمار فلموں کے گیت اور مکالمے لکھے۔ مکھڑا، کرتار سنگھہ ، یار بیلی، بابل دا ویہڑا ان کی مشہور فلمیں ہیں۔ وارث لدھیانوی نے 5 ستمبر 1992 کو لاہور میں وفات پائی۔

احمد عقیل روبی راوی ہیں، جنرل ضیاء الحق کا زمانہ تھا۔ پولیس والے لوگوں کے منہ سونگھتے پھرتے تھے۔ وارث لدھیانوی کا بھی سُونگھا اور اسے پکڑ کر تھانے لے گئے۔ حوالات میں بند کر نے لگے تو وارث لدھیانوی نے تھانیدار سے پوچھا

‘‘پتر، تیرا ویاہ ہویا اے؟’’
تھانیدار نے کہا
’’
ہاں ہویا اے، تے ایس تھانے وچ سارے ویاہے ہوئے نیں۔ ’’
’’
وارث نے کہا ’’تے فیر ساریاں دے ویاہ تے اک گیت ضرور بھیناں نے گایا ہونا اے
’’
تھانیدار نے پوچھا
’’
کیہڑا گیت ؟‘‘
’’
دیساں دا راجہ میرے بابل دا پیارا
امڑی دے دل دا سہارا
نی ویر میرا گھوڑی چڑھیا‘‘ وارث نے کہیا

’’ہاں ایہہ گیت گایا سی، پر تیرا ایس گیت نال کیہ تعلق؟‘‘ تھانیدار نے کہیا۔
وارث لدھیانوی نے ہنس کے کہا

’’یار ایہہ گیت میں لکھیا اے تے میرا ناں وارث لدھیانوی اے۔‘‘
تھانیدار نے تانگا منگوایا اور ایک سپاہی کی ڈیوٹی لگائی۔

’’ جا وارث صاحب نوں سلطان پورہ چھڈ کے آ۔ کدھرے کوئی ہور پولیس والا نہ پھڑ لوے‘‘

One Comment

  1. ہائے اب ایسے امر گیت تخلیق کرنے والے تخلیق کار کہاں؟استاد دامن اور صوفی تبسّم کے بعد قبولِ عام پنجابی شاعری کا ایک دور ختم ہوگیا۔ پنجابی زبان میں بہت اچھّا ادب تخلیق ہورہا ہے۔ مگر ان لوگوں کا دور پنجابی شاعری کے عروج کا دور تھا، عام فہم زبان اور دل کو چھو لینے والے کلام، ان ہی لوگوں کا حق تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *