کلثوم نواز کی جیت، ایسٹیبلشمنٹ کی ناکامی

پاکستانی قومی اسمبلی میں سابق وزیر اعظم نواز شریف کی خالی کردہ نشست پر حلقہ این اے 120 میں اتوار سترہ ستمبر کو ہونے والا ضمنی الیکشن غیر سرکاری نتائج کے مطابق نواز شریف کی اہلیہ کلثوم نواز نے واضح برتری سے جیت لیا ہے۔

پاکستان کی پارلیمانی تاریخ کے اہم ترین ضمنی انتخابات میں سے ایک قرار دیے جانے والے اس بہت کانٹے دار انتخابی معرکے میں نواز شریف کی اہلیہ اور ان کی جماعت پاکستان مسلم لیگ نون کی امیدوار بیگم کلثوم نواز کا مقابلہ یوں تو درجنوں دیگر امیدواروں سے بھی تھا لیکن ان کی سب سے بڑی حریف عمران خان کی پاکستان تحریک انصاف کی امیدوار ڈاکٹر یاسمین راشد تھیں، جو عبوری غیر سرکاری نتائج کے مطابق دوسرے نمبر پر رہیں۔

پاکستانی میڈیا کے مطابق تمام پولنگ اسٹیشنوں میں ووٹوں کی گنتی کے بعد حاصل ہونے والے غیر سرکاری نتائج کے مطابق کلثوم نواز شریف کو 61254 ووٹ ملے جبکہ دوسرے نمبر پر رہنے والی پی ٹی آئی کی امیدوار ڈاکٹر یاسمین راشد کو 47066 ووٹ ملے۔ اس طرح کلثوم نواز کو یاسمین راشد کے مقابلے میں قریب 14 ہزار ووٹ زیادہ ملے۔

کلثوم نواز کی کامیابی کے بعد لاہور میں نون لیگ کے کارکنوں نے جگہ جگہ جشن منانا شروع کر دیے۔ نواز شریف کی اہلیہ پہلی بار پاکستانی پارلیمان کے ایوان زیریں کی رکن منتخب ہوئی ہیں۔ انہوں نے اس سے پہلے کبھی کسی بھی الیکشن میں خود بہ طور امیدوار حصہ نہیں لیا تھا اور نہ ہی وہ آج سے پہلے کسی عوامی عہدے پر فائز رہی ہیں۔

ووٹوں کی گنتی پوری ہونے کے بعد جیسے ہی یہ ظاہر ہونا شروع ہوا کہ یہ ضمنی الیکشن مسلم لیگ نون ہی نے جیت لیا ہے، تو نواز شریف کی بیٹی اور اپنی والدہ کی انتخابی مہم چلانے والی مریم نواز نے لاہور میں اپنی پارٹی کے ووٹروں کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس الیکشن میں ایک بار پھر مسلم لیگ نون کو کا میابی دلوا کر عوام نے یہ فیصلہ سنا دیا ہے کہ وہ پاناما کیس میں سابق وزیر اعظم نواز شریف کی نااہلی کے عدالتی فیصلے سے اتفاق نہیں کرتے۔

مریم نواز نے اس موقع پر یہ بھی کہا کہ این اے 120 میں مسلم لیگ نون کی فتح ان قوتوں کی ناکامی بھی ہے، جو نواز شریف کے گرد گھیرا تنگ کرتی جا رہی تھیں۔

پاکستانی قومی اسمبلی کا حلقہ این اے 120 لاہور سے قومی اسمبلی کی تیسری نشست ہے، جس کے لیے اتوار کے روز ہونے والی عوامی رائے دہی کی خاطر مجموعی طور پر 220 پولنگ اسٹیشن قائم کیے گئے تھے۔ ان میں سے 103 پولنگ اسٹیشن مردوں، 98 خواتین اورر 19 مردوں اور خواتین دونوں کے لیے بنائے گئے تھے۔

اس دوران قریب 30 ہزار ووٹروں نے اپنے ووٹ ان 100 سے زائد بائیو میٹرک مشینوں کے ذریعے بھی ڈالے، جو 39 انتخابی مراکز پر رکھی گئی تھیں۔

غیر سرکاری نتائج کے مطابق اس الیکشن میں ملی مسلم لیگ نامی جماعت کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار یعقوب شیخ تیسرے اور پاکستان پیپلز پارٹی کے امیدوار فیصل میر چوتھے نمبر پر رہے۔ کلثوم نواز اور نواز شریف اس وقت خود لندن میں ہیں، جہاں کلثوم نواز کا سرطان کا علاج ہو رہا ہے۔

DW.COM

2 Comments

  1. N.A. 120 election results .
    PML n .61254
    PTI . 47066
    Ppp.2520
    MML.4174
    Looking at the by election held on 17 September 2017 results, Pl. read my comment and analysis——
    ML (N) had to win because of Punjab and central govt, is intact, it is always sitting government which uses all resources on its disposal, there is no credit performance and popularity of winning candidate, but the impact on 2018 coming election would be there if ML(N) remains in power with all pump and show, election authorities, ECP, conducting election authority, under Government agreed with opposition parties matters, less, There are several ways to rig, the election, new methods of bribing, the ECP staff and R.O’s and the local Police
    administration with Judiciary, This quality belongs to only ML(N) contesting election.
    The thing which I wanted to aware of the political parties that, NA 120 by election impact, on whole of Punjab would be land mark, if some one minutely analyses the the results, In Punjab PPP and JI has no place especially in central Punjab. A new outfit JuD converting into Milli Muslim League is upcoming seeing the result of Indp. Sh. Yakoob. crushing the oldest religious party JI, PPP has already been taken over by PTI,but has 33% following in Punjab, PPP especially in central Punjab never was in position to win in the past years. Now in 2018, PTI would be facing the same difficulties, losing into one to one competition but candidates more than four or five, it would be facing defeat.
    In 2018 election, if held then, the position as per party would be Punjab would fall into lap of ML(N) leaving few seats in south Punjab to PPP and PTI, in Sindh, PPP would gain more seats from Karachi, if MQM split into three groups which would never happen and KPK PTI position would be losing some of seats to NAP and PPP, but multi party would emerge for provincial set up, in Baluchistan would vary for future forecasting like the same but its structure would not be like present, nationalist have following with any majority party in centre. It is calculated thinking that there is no chance for IK to be next PM of Pakistan, PTI in the last four years lost all by election on its own seats.
    Youth of PTI might be critical and would use derogatory tongue as its norms is there. If PTI could not improve their image in Lahore where they have access of youths in majority, so Punjab has become no place for liking, let us see on the eve of election there would be lot of make and break of aspiring candidates for PTI and so many would fight as independents decreasing in divide.
    Pl. read it and comment it with logic not with abuse, have tolerance for democracy function in the country.
    No automatic alt text available.

  2. PmlN the most corrupt party led by a person who after 35 YEARS of polutics doesnot know what to do. Most idiot person of the world. And Panjabi people are worst people on the earth. They dont even think that PmlN had killed 12 INNOcent people of Awami tehreek but they vote for the Killers. LaANat to these punjabis and especially Lahoris.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *