کیوبا میں دودھ اور شہد کی نہریں نہیں بہتی ہیں۔1

asif-javaid4-252x300

آصف جاوید

 اِ س موضوع پر بات کرنے سے پہلے میں یہ  وضاحت  کردینا ضروری سمجھتا ہوں کہ  نہ  ہی میں سرمایہ دارانہ نظامِ حکومت کا  حامی  ہوں۔ نہ ہی میں اشتراکی نظامِ حکومت کا مخالف ہوں۔ میں تو  ذاتی طور پر ایک  انسان دوست  آدمی ہوں، جو سماجی مساوات، انسانی  برابری، قومی فلاح و بہبود، سماجی انصاف،  تعلیم، صحت،  روزگار کے مواقع، انسانی ترقّی  اور ، بنیادی انسانی حقوق، اظہارِ رائے کی آزادی،  خوشحال   انسانی  معاشرے کے قیام  کی جدوجہد کے لئے آواز بلند کرنے کو اپنی سماجی ذمّہ دار محسوس کرتا ہے۔

  اس مضمون کو تحریر کرنے کا مقصد قطعی طور پر  یہ نہیں ہے کہ میں اشتراکی نظامِ حکومت کے حامِل ممالک کی تذلیل اور سامراجی نظامِ حکومت کے حاِمل ممالک کی  تعریف و توصیف  کرنا چاہتا ہوں، بلکہ میں  یہاں صرف ا پنی مطالعاتی اور مشاہداتی  معلومات  کی روشنی میں کیوبا کی موجودہ صورتحال پر گفتگو کرنا چاہتا ہوں۔ 

 متعدّد بار کیوبا کے ساحلی تفریحی مقامات کی سیر،   شہروں ،  اور قصبات  میں کیوبن شہریوں کے حالاتِ زندگی کا مشاہدہ کرنے ، زراعت  کی صورتحال دیکھنے اور  سروِس فراہم کرنے والے  افراد سے  انٹرویوز   کے بعد  میں یہ بات بڑے وثوق سے کہہ سکتا ہوں کہ اشتراکی نظام کی افادیت کی مالا جپنے والوں ، فیڈرل کاسٹرو  کے قصیدے پڑھنے والوں کو شائد اس بات کا اندازہ  ہی نہیں کہ فیڈرل کاسٹرو   کے دور میں کیوبا کی کتنی  ہی نسلیں کسمپرسی اور غربت و افلاس، محرومی اور  ذلّت کی زندگی گزار کر مر  گئی ہیں۔

جمہوریہ کیوبا ، مگرمچھ کی  شکل سے مشابہہ ایک بڑے جزیرے  پر مشتمل خطِّہ زمین ہے۔   جس کے ایک طرف  بحیرہ کریبین   اور دوسری طرف وسیع و عریض اٹلانٹک اوشئین ہے۔  امریکہ کی مشہور ریاست فلوریڈا کا ساحلی شہر میامی ، کیوبا کے دارالحکومت ، ہوانا سے صرف  ایک سو ناٹیکل میل کی دوری پر واقع ہے۔

  کیوبا کا کل رقبہ لگ بھگ ایک لاکھ اسکوائر کلومیٹر ہے۔  کیوبا کی آب و ہوا گرم مرطوب ہے۔ پورے سال درجہ حرارت معتدل اور  اوسطاً 25   ڈگری سنٹی گریڈ رہتا  ہے۔ سردیوں میں بھی درجہ حرارت 21 ڈگری سنٹی گریڈ سے نیچے نہیں گرتا، اس ہی لئے سردیوں اور برف باری کے موسم میں یورپ، روس اور کینیڈا سے سیّاحوں کے جہاز بھر بھر کر کیوبا آتے ہیں۔

%da%a9%db%8c%d9%88%d8%a8%d8%a73

کیوبا کے 3700 کلومیٹر طویل ساحل پر دنیا کی جدید ترین آسائشوں سے مزیّن  ساحلی تفریح گاہیں، سارا سال  غیر ملکی سیّاحوں  کی کشش اپنی جانب مبذول رکھتی ہیں۔  اور یہی ٹوراِزم اس وقت کیوبا کی  قومی آمدنی کا ایک بڑا ذریعہ ہے۔ مگر کیوبا بنیادی طور پر ایک زرعی معیشت پر استوار ملک ہے۔

سنہ 1992 تک  دنیا میں گنّے سے شکر کی پیداوار حاصل کرنے والے ممالک  میں کیوبا کا نام سرِ فہرست  تھا۔  کیوبا کی   نیشنل شماریاتی ایجنسی کے مطابق  سنہ 2013 میں کیوبا کی  گراس جی ڈی پی  کا حجم  77 بلین  ڈالر  تھا۔   جس میں کیوبا کے پرائیویٹ اور کو آپریٹو سیکٹر کا جی ڈی پی میں حجم  25 فیصد تھا۔

ایک کروڑ سے کچھ زیادہ کی آبادی والے اس ملک میں اشتراکی نظامِ حکومت قائم ہے۔   سب کچھ ریاست کا ہے، عوام کا ذاتی کچھ بھی نہیں ہے۔   نہ عوام کا کسی چیز پر  ذاتی حقِّ ملکیت ہے۔

پندرویں صدی سے انیس ویں صدی تک کیوبا ،ہسپانوی نوآبادی رہاہے۔  لہذا  کیوبا  کی قومی زبان اور ذریعہ تعلیم  ہسپانوی ہے۔   امریکا نے  سنہ 1848 میں دس کروڑ ڈالر کے عوض جزیرہ  کیوبا کو ہسپانیہ سے خریدنے کی کوشش کی  تھی۔ اور ہسپانیہ کے انکار پر امریکی اربابِ اختیار نے ایک بیان مشتہر کیا تھا۔ جِس میں کہا گیا  تھا کہ جغرافیائی اعتبار سے کیوبا امریکی ریاست ہائے متّحدہ کا جزو ہے۔ اگر ریاست ہائے متّحدہ کو اُس کی خرید سے باز رکھا گیا تو   حقِّ شفعہکے قانون کی رو سے ہمیں حق پہنچتا ہے کہ ہم اُسے بہ زور ِ شمشیر فتح کرلیں۔

اسی حقِ شفعہ کے قانون کے تحت  سنہ 1898 میں امریکہ نے کیوبا پر اپنا دعویقائم کیا  تھا۔  اور باقاعدہ فوج کشی کی  تھی۔  سنہ 1899 میں میں امریکی بحری فوجیں کیوبا میں داخل ہوئیں اور کیوبا کے دستور میں جبراً ایک نئی شق کا اضافہ کروادیا  ۔

اِس شق کا مفہوم یہ تھا کہ امن ِ عامہ یا امریکی مفادات کے تحفظ کے لیے امریکی حکومت جب چاہے کیوبا میں اپنی فوجیں اتار سکتی ہے۔ اِس اختیار کوسہولت سے برتنے کے لیے امریکا نے کیوبا میں ایک مستقل فوجی اڈہ قائم کرنے کا اجازت نامہ بھی حاصل کرلیا تھا۔

%da%a9%db%8c%d9%88%d8%a8%d8%a78

پھر امریکی سرپرستی میں کیوبا نے 1901 میں اسپین سے باقاعدہ آزادی حاصل   کرلی۔ مگر بدقسمت کیوبا ،  آسمان سے گر کر کھجور میں اٹک گیا۔ کیونکہ اب امریکہ نے کیوبا میں گوانٹا نامو بے  کے مقام پر اپنے بحری فوجی اڈّے قائم کرنے کے ساتھ ساتھ اپنے آئین میں دی گئی   پلاٹ  ترمیم ” (یہ قانون حقِّ شفعہ ہی کی ایک قسم ہے) کا فائدہ اٹھاتے ہوئے کیوبا کے حکومتی  و انتظامی معاملات کو چلانے کے اختیار کا دعویبھی قائم کردیا تھا۔

اگلے 30 سال کیوبا میں جو بھی حکومتیں بنتی رہیں ، سب امریکی مفادات کی  براہِ راست عمل داری میں  رہیں۔ امریکی تجارتی کمپنیاں پورے کیوبا کی زرخیز زمیں کی پیداوار کی مالک رہیں۔ 1933 میں کیوبا میں قوم پرست تحریکوں نے سر اٹھانا شروع کردیا، 1934 میں، فُل جینشیو بٹسٹا  کی قیادت  نے امریکی صدر فرنکلن روزویلٹ سے مذاکرات کے ذریعے امریکی آئین سے پلاٹ ترمیم”   کا خاتمہ کروا کر کیوبا پر امریکہ کی آئینی اجارہ داری کو ختم  تو کروادیا۔  مگر گوانتا نامو بے پر قائم امریکی بحری بیڑے کو ختم نہیں کرایا جاسکا۔

سنہ 1952 تک  بٹسٹا ، امریکی چھتری کے سائے میں کیوبا پر حکومت کرتا رہا۔  بٹسٹا کا دورِ حکومت ، کیوبا کا بدترین دورِ حکومت تھا۔ کیوبا کی عوام معاشی زبوں حالی کا بدترین شکار تھی،  غربت، جہالت، اور بیروزگاری کا دور دورہ تھا۔  اس موقعہ پر فیڈرل کاسٹرو منظرِ عام پر آئے۔

جاری ہے، 

5 Comments

  1. جی ہاں کیوبامیں دودھ اور شہد کی نہریں نہیں بیتی ہیں. آپ ﺫرا بتانا پسند کریں گے کہ وہ کہاں بہتی ہیں. شائید اس دنیا میں کہیں نہیں. ایک امکان تھا کہ الطاف حسین کے شہر کراچی میں یہ ممکن ہوتا مگر دشمننان محاجرین نے ایسا نہ ہونے دیا.
    آپ کو اپنے متعلق کچھ لکھنے اور وضاحت کرنے کی ضرورت نہیں. آپ کے مضامین آپ کے خیالات و نظریات کی ترجمانی کرتے ہیں. پورے مضمون میں کیوبا کی تعریف کرنے کے باوجود آپ کے مضمون کا عنوان کیوبا مخالف دیکھ کر بہت “اچھا” لگا. یوں ہی بین بین لکھتے رہئے دونوں نظام معیشت میں جگہ بنی رہے گی.
    صادق جتوئی

  2. Pingback: کیوبا میں دودھ اور شہد کی نہریں نہیں بہتی ہیں۔2 – Niazamana

  3. علی صدیقی says:

    ان صاحب کا کام صرف اسلامی شعائر اور تیسری دنیا کے ممالک کی تذلیل کرنا ھے

    • صدیقی صاحب کیا آپ بتانا پسند کریں گے کہ صاحب مضمون نے کون سے اسلامی شعائر کی تذلیل کی ہے؟ اور تیسیری دنیا کے ممالک کی تذلیل کیا ہوتی ہے؟ کیا تیسری دنیا کے کرپٹ حکمرانوں کو بے نقاب کرنا ان ممالک کی تذلیل ہوتی ہے؟ ذرا وضاحت کیجیے۔

  4. Pingback: کیوبا میں دودھ اور شہد کی نہریں نہیں بہتی ہیں۔3 – Niazamana

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *