دہشت گردی کا حامی کون ہے ؟

4212_109624585991_3851843_nبیرسٹر حمید باشانی


پیرس میں ہونے والی دہشت گردی کی صرف مذمت کافی نہیں۔ یہ مذمت واضح، دوٹوک، واشگاف اور غیر مشرودط ہونی چاہیے۔مگر حقیقت میں ایسا نہیں ہے۔سوشل اور متبادل میڈیا پر ایسی ارائیں گردش کر رہی ہیں جو مذمت سے گریزاں ہیں۔

ان میں پہلے قسم ان لوگوں کی ہے جو اس واقعے کوجہاد تصور کرتے ہیں۔یہ لوگ کسی قسم کے بہانے یا معذرت کی بھی ضرورت محسوس نہیں کرتے۔۔ان کے نزدیک کافروں اور مشرکین کے خلاف جہاد قرانی حکم ہے۔ان کے خیال میں پورا مغرب شیطانی سماج ہے جس کے خلاف جہاد ہر مسلمان پر فرض ہے۔ان کے نزدیک پیرس کا واقعہ ان کے جہاد مسلسل کی ایک تازہ ترین کڑی ہے۔

یہ لوگ اگرچہ بہت بڑی تعداد میں نہیں ہیں۔لیکن اسلامی ممالک میں یہ لوگ قابل لحاظ تعداد میں موجود ہیں۔بعض جگہوں پر یہ اچھے خاصے وسائل کے مالک ہیں۔اور اپنے گردوپیش میں رائے عامہ کو متاثر کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔بعض اسلامی ممالک میں ان لوگوں نے اپنی باقاعدہ درس گاہیں اور عبادت گاہیں قائم کر رکھی ہیں۔ان جگہوں کو وہ نظریات و خیالات کے پر چار کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ یہ وہ نرسریاں ہیں جہاں سے دہشت گرد یا ان کے حامی پیدا ہوتے رہتے ہیں۔ دنیا دہشت گردی کے خلاف جتنا ڈھنڈورا مرضی پیٹ لے لیکن جب تک دہشت گردی کی ان نرسریوں کا کوئی مستقل حل نہیں نکالا جاتا اس وقت تک دہشت گردی کا یہ سلسلہ مکمل طور پر ختم نہیں ہو سکتا۔

دہشت گردی کے حامیوں میں دوسری قسم ان لوگوں کی ہے جو سیاسی طور پر سرگرم ہیں۔یہ شدت پسند نظریات رکھتے ہیں۔ان نظریات کی اساس مذہبی شدت پسندی ہے۔اپنے شدت پسندانہ مذہبی و سیاسی نظریات کے پر چار کے لیے یہ دنیا بھر میں مسلمانوں سے جڑے ہوئے سیاسی اور قومی مسائل کا سہارا لیتے ہیں۔چنانچہ مسئلہ کشمیر اور فلسطین وغیرہ ان کے پسندیدہ موضوعات ہیں۔ان مسئلوں کا سہارا لیکر یہ مسلسل اپنی نفرت، بغض ، تعصب اور عداوت کا اظہار کرتے رہتے ہیں۔

ان کی باتوں کو اگر غور سے سنا جائے تو یہ سمجھنے میں دیر نہیں لگتی کہ ان لوگوں کو کشمیری یا فلسطینی مسلمانوں سے اتنی ہمدردی نہیں جتنی ان کو یہودیوں یا ہندوؤں سے نفرت ہے۔یہ لوگ مسئلہ کشمیر اور مسئلہ فلسطین کی آڑ میں اپنی اس بے پناہ نفرت اور تعصب کا اظہار کرتے رہتے ہیں۔چنانچہ وہ ان مسائل کے ایسے ایسے حل تجویز کرتے رہتے ہیں جو نا ممکن اور نا قابل عمل ہیں۔یہ لوگ کشمیر اور فلسطین کی آزادی کے مطالبے کے ساتھ ساتھ ایک ہی سانس میں یہ بھی کہتے ہیں کہ جب تک اس دنیا میں اسرائیل اور بھارت کا وجود ہے اس وقت تک مسلمانوں کے ساتھ انصاف کی توقع عبث ہے۔گویا ان کا اصل مقصد کشمیر یا فلسطین کی آزادی نہیں بلکہ بھارت اور اسرائیل کی تباہی ہے۔

جن لوگوں کا خیال ہے کہ دنیا میں دہشت گردی کی ایک وجہ مسئلہ کشمیر اور فلسطین ہے وہ اس حقیقت سے صرف نظرکر رہے ہیں کہ اگر اس دنیا میں یہ دو مسئلے نہ بھی ہوتے پھر بھی بھارت اور اسرائیل کے خلاف جہاد کسی نہ کسی شکل میں ضرور چل رہا ہوتا۔چنانچہ ان دو مسائل کے حل کے بعد بھی اس ذہانت کے لوگ اپنی کاروائیاں جاری رکھیں گے۔دہشت گردی کے مستقل حل کے لیے اس مائنڈ سیٹ میں تبدیلی ضروری ہے۔

تیسری قسم ان لوگوں کی ہے جو دہشت گردی کی تو مذمت کرتے ہیں لیکن گھوما پھرا کر دہشت گردوں کو مختلف جواز فراہم کرتے ہیں۔یہ نیم مذہبی قسم کے لوگ ہیں جنہوں نے سیاسی کارکن کا روپ دھار کر مختلف سیاسی جماعتوں میں پنا لے رکھی ہے۔یہ بظاہر کلین شیو یا بغیر حجاب کے ہوتے ہیں لیکن ان خیالات بے حد شدت پسندانہ اور رجعتی ہوتے ہیں۔ان لوگوں کی ایک اچھی خاصی تعداد مگربی ممالک میں آباد ہے۔لیکن یہ مغربی تہذیب، اخلاقیات اور طرز زندگی کے سخت مخالف ہیں۔مغرب کے خلاف ان کے دلوں میں بہت بڑا بغض ہے جس کا اظہار وہ وقتا فوقتا کرتے رہتے ہیں۔ہر دہشت گردی کے واقعے کے بعد یہ کوئی نئی کانسپیریسی تھیوری لے آتے ہیں۔

یہ نیویارک اور پیرس جیسے واقعات کو اسرائیل کی کاروائی قرار دیتے ہیں۔دہشت گردوں کو بری الذمہ قرار دینے یا ان کی اس حرکت کو جواز فراہم کرنے کے لیے ان کی منطق یہ ہوتی ہے کہ داعش اور القاعدہ جیسے تمام گروہ خود مغرب کے پیدا کردہ ہیں، چنانچہ دہشت گردوں کی مذمت کرنے کے بجائے یہ لوگ خود مغرب کو اس کا مورد الذام ٹھہراتے ہیں۔

چوتھی قسم ان لوگوں کی ہے جو ان کاروائیوں کو مغربی سامرج کے خلاف مزاحمت کا نام دیتے ہیں۔یہ لوگ سیاسی طور پر قرون اولی میں رہتے ہیں۔یہ لوگ عقیدہ پرستوں سے بھی بڑے بنیاد پرست ہیں، ذہنی طور پر ماضی میں رہتے ہیں اور اپنے ارد گرد ہونے والی تبدیلیوں کا ادراک نہیں رکھتے۔دہشت گردی کے مستقل خا تمے کے لیے دیگر اقدامات کے علاوہ مذکورہ بالا مائنڈ سیٹ میں تبدیلی کے طریقوں پر غورکی ضرورت ہے۔

3 Comments

  1. creation of terrorists is in reaction to the injustice being done with muslims like in Phalistine and kashmir no doubt.Such choronic issues provide a plateform to terrorists to get organised and to create their sympathisers amongs the general populace.Yes fundamentalism is yes another issue amongs few segments of Islam specially Arab branded islam

  2. My out going point is economic interest of Lobbister arround the politician in Capitalist system. Consider only war head produsers in US and in West. Their lobbisters and their policies are to find enemies if not create one around the potencial buyer countries like Saudi Arabia and Israel. US and West is not friends of these countries but have them like their weapons buyers. Now Pakistan is on their front line to stop Chines investment and we can see many sonorous in near future.
    Our Politician and war lords are very cheap to sale themselves, for that have we good experience.
    Best regards

  3. Mohdsultanyousazai@yahoo.com says:

    Seminaries should be closed every where the mind set of religious class and madness of religiosity will come down itself,and once the time will come when the present havoc will be changed in to humanity.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *